اتوار، 29 اپریل، 2012

کیا پوسٹ پسند آئی۔ ۔ سوشل شیئرنگ وجیٹ



بلوگر کے لیے Do you like this post ? و جیٹ

قارئین آپ نے بہت ساری ویب سائٹس پر  یہ وجیٹ دیکھی ہوگی ۔ جب ہم نے پہلی مرتبہ یہ وجیٹ دیکھی تھی تو کافی appealing محسوس ہوئی تھی اور کچھ دنوں پہلے یونہی انٹرنیٹ پر "مٹر گشتی "کرتے ہوئے ہمیں اس widget کا کوڈ حاصل ہوا اور چونکہ آج ذرا فرصت بھی ہے تو ہم نے سوچا شاید کیوں نہ اس وجٹ کو آپ لوگوں کی نذر کیا جائے؟۔


ا
جی ! کام بہت آسان ہے ۔۔ میں سمجھتا ہوں آپ میں سےجو  احباب" دو قدم آگے"  ہیں وہ  dashboard سے ہوتے ہوئے tempelate اور  edit html  چھلانگ لگا چکے ہو گے۔ خیر اگر آپ ابھی تک ہماری تحریر پر اٹکے ہوئے ہیں تو edit html  پر کلک کرنے کے بعد اب expand widget کو بھی مارک کر دیجیے۔

اب آپ کو ctrl+f دبا کر


<data:post.body/>




 تلااش کرنا ہے۔

اور اس کے ٹھیک نیچے مندرجہ ذیل کوڈ چسپاں کرنا ہے۔

ملحوظ رہے کہ کوڈ میں جہاں کہیں آپ کو ہمارے لنکس نظر آ رہے ہوں وہاں سے ہمارے لنکس ہٹا کر آپ کو اپنے روابط add کرنے ہیں مثلاً ٹوٹر یوزر نیم وغیرہ ۔ ۔ ۔



&lt;b:if cond=&#039;data:blog.pageType == &amp;quot;item&amp;quot;&#039;&gt; &lt;style&gt; form.emailform{ margin:20px 0 0; display:block; clear:both; } .apttext{ background:url(http://3.bp.blogspot.com/-SoB4RN7Bchk/TZ1ouay9q0I/AAAAAAAAAlE/dkyZEzF2HIw/s28/w2b-mail.png) no-repeat scroll 4px center transparent; padding:7px 15px 7px 35px; color:#666; font-weight:bold; text-decoration:none; border:1px solid #D3D3D3; -moz-border-radius: 4px; -webkit-border-radius: 4px; border-radius: 4px; -moz-box-shadow: 1px 1px 2px #CCC inset; -webkit-box-shadow: 1px 1px 2px #CCC inset; box-shadow: 1px 1px 2px #CCC inset; } .aptbutton{ color:#666; font-weight:bold; text-decoration:none; padding:6px 15px; border:1px solid #D3D3D3; cursor: pointer; -moz-border-radius: 4px; -webkit-border-radius: 4px; -goog-ms-border-radius: 4px; border-radius: 4px; background: #fbfbfb; background: -moz-linear-gradient(top, #fbfbfb 0%, #f4f4f4 100%); background: -webkit-gradient(linear, left top, left bottom, color-stop(0%,#fbfbfb), color-stop(100%,#f4f4f4)); background: -webkit-linear-gradient(top, #fbfbfb 0%,#f4f4f4 100%); background: -o-linear-gradient(top, #fbfbfb 0%,#f4f4f4 100%); background: -ms-linear-gradient(top, #fbfbfb 0%,#f4f4f4 100%); filter: progid:DXImageTransform.Microsoft.gradient( startColorstr=&amp;#39;#FBFBFB&amp;#39;, endColorstr=&amp;#39;#F4F4F4&amp;#39;,GradientType=0 ); background: linear-gradient(top, #fbfbfb 0%,#f4f4f4 100%); } #doulike-outer { -moz-border-radius: 10px 10px 10px 10px; -webkit-border-radius: 10px 10px 10px 10px; -goog-ms-border-radius: 10px 10px 10px 10px; border-radius: 10px; background: none repeat scroll 0 0 transparent; border: 1px solid #D3D3D3; padding: 8px; -moz-transition: all 0.3s ease-out; -o-transition: all 0.3s ease-out; -webkit-transition: all 0.3s ease-out; -ms-transition: all 0.3s ease-out; transition: all 0.3s ease-out; width:480px; } #doulike-outer:hover{ background: none repeat scroll 0 0 #FFF; -moz-box-shadow: 1px 1px 2px #CCC inset; -webkit-box-shadow: 1px 1px 2px #CCC inset; box-shadow: 1px 1px 2px #CCC inset; } #doulike-outer td{ padding:3px 0; } &lt;/style&gt; &lt;div id=&#039;doulike-outer&#039;&gt; &lt;div id=&#039;doulike&#039;&gt; &lt;table width=&#039;100%&#039;&gt; &lt;tbody&gt; &lt;span style=&#039;font-style: italic; font-size: 30px; font-family:”Alvi Nastaleeq”,”Jameel Noori Nastaleeq”,,arial,sans-serif, verdana; color:#FF683F;&#039;&gt;کیا آپ کو یہ پوسٹ پسند آئی ؟&lt;/span&gt; &lt;tr&gt; &lt;td&gt; &lt;div id=&#039;fb-root&#039;/&gt;&lt;script src=&#039;http://connect.facebook.net/en_US/all.js#xfbml=1&#039;/&gt;&lt;fb:like font=&#039;&#039; href=&#039;&#039; layout=&#039;button_count&#039; send=&#039;true&#039; show_faces=&#039;false&#039; width=&#039;300&#039;/&gt; &lt;/td&gt; &lt;/tr&gt; &lt;tr&gt; &lt;td align=&#039;left&#039;&gt; &lt;p style=&#039;color:#666; font-style:italic; margin:0px 0px 5px 0px; &#039;&gt;تازہ ای میل اپڈیٹس حاصل کریں&lt;/p&gt; &lt;form action=&#039;http://feedburner.google.com/fb/a/mailverify&#039; class=&#039;emailform&#039; method=&#039;post&#039; onsubmit=&#039;window.open(&amp;apos;http://feedburner.google.com/fb/a/mailverify?uri=saifsstuff&amp;apos;, &amp;apos;popupwindow&amp;apos;, &amp;apos;scrollbars=yes,width=550,height=520&amp;apos;);return true&#039; style=&#039;margin: 0pt;&#039; target=&#039;popupwindow&#039;&gt; &lt;input name=&#039;uri&#039; type=&#039;hidden&#039; value=&#039;saifsstuff&#039;/&gt; &lt;input name=&#039;loc&#039; type=&#039;hidden&#039; value=&#039;en_US&#039;/&gt; &lt;input class=&#039;apttext&#039; name=&#039;email&#039; onblur=&#039;if (this.value == &amp;quot;&amp;quot;) {this.value = &amp;quot;Enter your email...&amp;quot;;}&#039; onfocus=&#039;if (this.value == &amp;quot;Enter your email...&amp;quot;) {this.value = &amp;quot;&amp;quot;}&#039; type=&#039;text&#039; value=&#039;Enter your email...&#039;/&gt; &lt;input alt=&#039;&#039; c<b:if cond='data:blog.pageType == &quot;item&quot;'> <style> form.emailform{ margin:20px 0 0; display:block; clear:both; } .apttext{ background:url(http://3.bp.blogspot.com/-SoB4RN7Bchk/TZ1ouay9q0I/AAAAAAAAAlE/dkyZEzF2HIw/s28/w2b-mail.png) no-repeat scroll 4px center transparent; padding:7px 15px 7px 35px; color:#666; font-weight:bold; text-decoration:none; border:1px solid #D3D3D3; -moz-border-radius: 4px; -webkit-border-radius: 4px; border-radius: 4px; -moz-box-shadow: 1px 1px 2px #CCC inset; -webkit-box-shadow: 1px 1px 2px #CCC inset; box-shadow: 1px 1px 2px #CCC inset; } .aptbutton{ color:#666; font-weight:bold; text-decoration:none; padding:6px 15px; border:1px solid #D3D3D3; cursor: pointer; -moz-border-radius: 4px; -webkit-border-radius: 4px; -goog-ms-border-radius: 4px; border-radius: 4px; background: #fbfbfb; background: -moz-linear-gradient(top, #fbfbfb 0%, #f4f4f4 100%); background: -webkit-gradient(linear, left top, left bottom, color-stop(0%,#fbfbfb), color-stop(100%,#f4f4f4)); background: -webkit-linear-gradient(top, #fbfbfb 0%,#f4f4f4 100%); background: -o-linear-gradient(top, #fbfbfb 0%,#f4f4f4 100%); background: -ms-linear-gradient(top, #fbfbfb 0%,#f4f4f4 100%); filter: progid:DXImageTransform.Microsoft.gradient( startColorstr=&#39;#FBFBFB&#39;, endColorstr=&#39;#F4F4F4&#39;,GradientType=0 ); background: linear-gradient(top, #fbfbfb 0%,#f4f4f4 100%); } #doulike-outer { -moz-border-radius: 10px 10px 10px 10px; -webkit-border-radius: 10px 10px 10px 10px; -goog-ms-border-radius: 10px 10px 10px 10px; border-radius: 10px; background: none repeat scroll 0 0 transparent; border: 1px solid #D3D3D3; padding: 8px; -moz-transition: all 0.3s ease-out; -o-transition: all 0.3s ease-out; -webkit-transition: all 0.3s ease-out; -ms-transition: all 0.3s ease-out; transition: all 0.3s ease-out; width:480px; } #doulike-outer:hover{ background: none repeat scroll 0 0 #FFF; -moz-box-shadow: 1px 1px 2px #CCC inset; -webkit-box-shadow: 1px 1px 2px #CCC inset; box-shadow: 1px 1px 2px #CCC inset; } #doulike-outer td{ padding:3px 0; } </style> <div id='doulike-outer'> <div id='doulike'> <table width='100%'> <tbody> <span style='font-style: italic; font-size: 30px; font-family:”Alvi Nastaleeq”,”Jameel Noori Nastaleeq”,,arial,sans-serif, verdana; color:#FF683F;'>کیا آپ کو یہ پوسٹ پسند آئی ؟</span> <tr> <td> <div id='fb-root'/><script src='http://connect.facebook.net/en_US/all.js#xfbml=1'/><fb:like font='' href='' layout='button_count' send='true' show_faces='false' width='300'/> </td> </tr> <tr> <td align='left'> <p style='color:#666; font-style:italic; margin:0px 0px 5px 0px; '>تازہ ای میل اپڈیٹس حاصل کریں</p> <form action='http://feedburner.google.com/fb/a/mailverify' class='emailform' method='post' onsubmit='window.open(&apos;http://feedburner.google.com/fb/a/mailverify?uri=saifsstuff&apos;, &apos;popupwindow&apos;, &apos;scrollbars=yes,width=550,height=520&apos;);return true' style='margin: 0pt;' target='popupwindow'> <input name='uri' type='hidden' value='saifsstuff'/> <input name='loc' type='hidden' value='en_US'/> <input class='apttext' name='email' onblur='if (this.value == &quot;&quot;) {this.value = &quot;Enter your email...&quot;;}' onfocus='if (this.value == &quot;Enter your email...&quot;) {this.value = &quot;&quot;}' type='text' value='Enter your email...'/> <input alt='' class='aptbutton' title='' type='submit' value='Submit'/> </form> </td> <td><p style='color:#666; font-style:italic; margin:0px 0px 5px 0px; '>Follow us!</p> <a href='http://feeds.feedburner.com/saifsstuff' rel='nofollow' target='_blank' title='Suscribe to RSS Feed'><img src='http://2.bp.blogspot.com/_nDNgmK8FIyI/TUJaXDrh48I/AAAAAAAAAVM/zLmcNtCgi9Y/s40/w2bRSS+.png'/></a> <a href='http://twitter.com/Happysaif' rel='nofollow' target='_blank' title='Follow us on Twitter'><img src='http://2.bp.blogspot.com/_nDNgmK8FIyI/TUJaUf7v0CI/AAAAAAAAAU8/7vfe8Iw3ohc/s40/w2bTwitter.png'/></a> <a href='http://www.facebook.com/urdushairey' rel='nofollow' target='_blank' title='Follow us on Facebook'><img src='http://1.bp.blogspot.com/_nDNgmK8FIyI/TUJaWNBkZnI/AAAAAAAAAVE/nZ0byXaqur8/s40/w2bFaceBook.png'/></a> </td> </tr> </tbody></table></div></div> </b:if> lass=&#039;aptbutton&#039; title=&#039;&#039; type=&#039;submit&#039; value=&#039;Submit&#039;/&gt; &lt;/form&gt; &lt;/td&gt; &lt;td&gt;&lt;p style=&#039;color:#666; font-style:italic; margin:0px 0px 5px 0px; &#039;&gt;Follow us!&lt;/p&gt; &lt;a href=&#039;http://feeds.feedburner.com/saifsstuff&#039; rel=&#039;nofollow&#039; target=&#039;_blank&#039; title=&#039;Suscribe to RSS Feed&#039;&gt;&lt;img src=&#039;http://2.bp.blogspot.com/_nDNgmK8FIyI/TUJaXDrh48I/AAAAAAAAAVM/zLmcNtCgi9Y/s40/w2bRSS+.png&#039;/&gt;&lt;/a&gt; &lt;a href=&#039;http://twitter.com/Happysaif&#039; rel=&#039;nofollow&#039; target=&#039;_blank&#039; title=&#039;Follow us on Twitter&#039;&gt;&lt;img src=&#039;http://2.bp.blogspot.com/_nDNgmK8FIyI/TUJaUf7v0CI/AAAAAAAAAU8/7vfe8Iw3ohc/s40/w2bTwitter.png&#039;/&gt;&lt;/a&gt;




 

سوموار، 23 اپریل، 2012

بلوگر کے لیے اڑتا ہوا ٹوئٹر پرندہ



بلوگر کے لیے اڑتا ہوا ٹوٹر برڈ

قارئین ہمارے بلوگ پر اس پیارے سے  اڑتے ہوئے ٹوٹر برڈ نے آپ کی توجہ اپنی  طرف ضرور مرکوز کی ہوگی ؟
کیا آپ بھی اپنے بلوگ  پر اس پرندے کو اڑتے ہوئے دیکھنا چاہتے ہیں؟ہمیں یہ کوڈ  محمد مصطفیٰ کے بلاگ www.mybloggertricks.com سے حاصل ہوا۔
ہم آپ کا زیادہ وقت برباد نا کرتے ہوئے آپ کو کوڈ دیتے ہیں۔

اپنے بلوگر دیش بورڈ میں جا کر ٹیمپلیٹ پر کلک کریں۔
اپنی ٹیمپلیٹ میں درج ذیل کوڈ  کنٹرول اور ایف دبا کر  تلاش کریں۔


</body>
اب اس کے تھیک اوپر درج ذیل کوڈ  چسپاں کر دیں۔

<script src='http://bloggerblogwidgets.googlecode.com/files/way2blogging.org-tripleflap.js' type='text/javascript'> </script> <script type='text/javascript'> var twitterAccount = &quot;happysaif&quot;; var tweetThisText = &quot; <data:blog.pageTitle/> : <data:blog.url/> &quot;; tripleflapInit(); </script>

 اس کوڈ میں آپ کو ایک معمولی سی تبدیلی کرنی ہے ۔ کوڈ میں جہاں آپ کو  Happysaif
نظر آئیں وہاں اپنا  Twitter Username  شامل کر دیں۔

نمونہ دیکھنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

How to Show copyright when someone copy your article.



اپنے آرٹیکلس چوری ہونے سے کیسے بچائیں؟

آج کی پوسٹ میں ہم آپ کے ساتھ ایک زبردست trick  شیئر کرنے جا رہے ہیں۔  کافی مرتبہ ایسا ہوتا ہے کہ آپ کسی موضوع پر بری عرق ریزی سے کوئی آرٹیکل تیا ر کرتے ہے لیکن بعض اوقات  کسی نیک انسان  کو آپ کا وہ کام ایسا پسند آ جاتا ہیکہ وہ copy rights  پرواہ نا کرتے ہوئے مفاد عامہ کی خاطر انتہائی نیک نیتی سے  اپنے بلوگ یا ویب پر اپنے نام کے ساتھ شائع کر دیتا ہے۔ اسی نیک نیتی کو روکنے کے لیے ہم آپ  کے ساتھ ایک کوڈ شیئر کر رہے ہیں۔
اس کوڈ کی خاصیت یہ ہیکہ جب بھی کوئی آپ کا آرٹیکل کہیں  paste  کرنا چاہے گا آپ کا page link اور کاپی رائٹ بھی ساتھ میں چسپاں ہوگا۔ (آزمائشی طور پر آپ اس تحریر کو copy+paste کر سکتے ہیں۔)

کوڈ کو استعمال کرنے کا طریقہ کافی آسان ہے۔
 Blogger Dashboard میں جاکر ٹیمپلیٹ پر کلک کیجیے۔ اب edit html کیجیے۔اب ctrl+f  دبا کر 


<Head/>

 تلاش کیجیے اور اس کے ٹھیک اوپر مندرجہ ذیل کودڈشامل کیجیے۔
اپنی ٹیمپلیٹ save کیجیے اور ہمارے اس آرٹیکل کو سراہتے ہوئے ٹویٹ ، پلس ون یا فیس بک شیئر کرنا نا بھولیں۔


<script type='text/javascript'>
function addLink() {
    var body_element = document.getElementsByTagName('body')[0];
    var selection;
    selection = window.getSelection();
    var pagelink = "<br/><br/> Original from: <a href='"+document.location.href+"'>"+document.location.href+"</a><br/>Copyright Saif`s Stuff - All Rights Reserved"; // change this if you want
    var copytext = selection + pagelink;
    var newdiv = document.createElement('div');
    newdiv.style.position='absolute';
    newdiv.style.left='-99999px';
    body_element.appendChild(newdiv);
    newdiv.innerHTML = copytext;
    selection.selectAllChildren(newdiv);
    window.setTimeout(function() {
        body_element.removeChild(newdiv);
    },0);
}document.oncopy = addLink;
</script>

مندرجہ بالا کوڈ سے saif`s Stuff کو ہٹا کر آپ اپنا یا اپنے بلوگ کا نام شامل کر سکتے ہیں۔

اتوار، 1 اپریل، 2012

بلوگر ڈائری سانچہ/ٹیمپلیٹ


بلوگر کے لئے ڈائری نوٹ بک اردو سانچہ


اس سے پہلے بھی ہم آپ کی خدمت میں اردو سانچے پیش کر چکے ہے لیکن آج ہم ایک ایسا سانچہ پیش کر رہے ہیں جسے آپ اپنی پرسنل ڈائری کے طرز پر بھی استعمال کر سکتے ہیں اور پبلک بلاگنگ کے لیے بھی۔ ۔۔۔
فی الحال ہم یہ سانچہ اپنے بلاگ اردو شاعری کے لیے استعمال کر رہے ہیں۔



  

تیزابیت


تیزابیت کیوں بڑھتی ہے؟
ڈاکٹر صاحب مجھے  جلدی چیک کیجیے  کیا ہو گیا ۔ ۔  ۔۔  اف سینے میں درد ہو رہا ہے  اور چکّر بھی آ رہے ہیں ۔۔  یااللہ کہی یہ دل کا دورہ تو نہیں ہے ؟ شاید بی پی بڑھ گیا ہو ؟ جب ہم نے اپنی پریکٹس کی شروعات کی تھی تو مریض کے ساتھ ساتھ ہم بھی خوفزدہ ہو جاتے تھے  ضرور یہ دل کا دورہ ہے ۔ لیکن  گزرتے وقت کے ساتھ ساتھ ہم بھی سیکھ گئے کہ کن امراض میں اس طرح کی علامات نظر آتی ہے۔
روزانہ ایسے کئی مریض ڈر و خوف کے عالم میں دواخانہ آتے ہیں لیکن تفصیلی معائنہ کرنے  کے بعد سمجھ میں آتا ہے کہ یہ دل کا  دورا نہیں بلکہ بڑھی ہوئی تیزابیت کے اثرات ہیں ۔  بچپن میں ہم اکثر دیکھتے تھے کہ تیزابیت سے عام طور سے عمر رسیدہ اشخاص ہی متاثر ہوتے ہیں اور ایسے لوگوں کو دوران سفر بھی اپنے ساتھ چورن کی ڈبّی رکھنی پڑتی تھی ۔ لیکن اب تو یہ نوبت آگئی ہیکہ
کیا بوڑھا کیا جوان  ۔ ۔ ہر کوئی ایسیڈتی سے ہے پریشان۔۔۔۔
برّصغیر ہند میں قیام پذیر لوگوں کی ایسیڈتی بڑھنا کوئی تعجّب خیز بات نہیں ہے بلکہ اگر دوسرے ممالک سے  موازنہ کیا جائے تو ایک سائنس کا طالبعلم اس بات پر اظہار حیرت کریگا کہ ہندستان و پاکستان والوں کی ایسیڈتی اتنی کم کیوں بڑھتی ہے۔ ہمارے یہاں کے کھانے  اس قدر مرغن اور مصالحہ دار ہوتے ہیکہ ہماری تیزابیت کا بڑھنا ایک لازمی شئے ہے۔ جی ہاں ! پوری دنیا میں سب سے زیادہ مصالحہ ہندستانی پکوان میں ہی استعمال کیا جاتا ہے۔
 کھانے کو چھوڑیے جناب ! نوجوانوں میں ایسیڈتی بڑھنے کا ایک اہم سبب چائے کی زیادتی اور  بے وقت کھانا ہے۔ آج کے اس مسابقتی دور میں ہماری مصروفیات کچھ اس طرح بڑھی ہوئی ہی کہ ہمیں سکون سے کھانا کھانے کی بھی فرصت نہیں ملتی۔ صبح ناشتے میں صرف چائے پی لی اور پھر چلتے چلتے کہیں باہر فاسٹ فوڈ کھا لیا ۔او ر پھر جہاں بھی کسی سے ملنے گئے  ہمارا استقبال  گرم چائے کی  پیالی سے کیا جاتا ہے ۔ دن بھر ایسی نا جانے کتنی گرم پیالیاں پینی پڑتی ہے  یہ چائے ہمارے معدہ میں پہونچ کر تیزابیت میں کئی گنا اضافہ کر دیتی ہے۔  بات صرف فاسٹ فوڈ اور چائے تک محدود ہوتی تو تھیک تھی لیکن اکثر نوجوان  سگریٹ کے بھی عادی ہوتے ہیں ۔جہاں کہیں ذرا موقعہ حاصل ہوا چائے کی دکان پر بیٹھے ہوئے سگریٹ کے بھی کش لے لئے۔۔۔  چٹ پٹا مصالحہ دار ناشتہ ، زیادہ دیر خالی پیٹ رہنا ، دن میں کئی مرتبہ چائے اور پھر اس پر ستم یہ کہ سگریٹ نوشی ۔۔  نتیجہ معدہ کے ورم کی شکل میں سامنے آتا ہے ۔
اسی طرح شراب کے عادی لوگوں میں بھی ایسیڈتی کافی بڑھی ہوئی ہوتی ہے اور کیوں نا بڑھے جب اللہ کے نبی ﷺ نے اسے امّ ا لخبائث قرار دیا ہے ۔
دیر رات تک جاگنا بھی تیزابیت میں کافی اضافہ کرتا ہے ۔ نیند اللہ کی بڑی نعمت ہے اللہ کے نبی ﷺ نے بھی جلدی سونے کی ہدایت دی ہے لیکن پھر بھی بعض لوگ بلا کسی وجہ کے دیر رات تک جاگتے رہتے ہیں بعض لوگوں کے نزدیک تو جلدی سونا دیہاتیوں کا سا طرز عمل ہے لیکن جلدی رات میں جلدی سونے اور صبح جلدی اٹھنے میں طبّی اعتبار سے بھی کئی فوائد پو شیدہ ہیں۔
پیٹ کی تکلیف کو لیکر کلنک میں آنے والے لوگوں میں اکثر لوگ وہ ہوتے یں جو رات کو دیر سے سوتے ہیں۔
ایسے لوگ جن کے اندر ڈر اور خوف زیادہ  ہو ، اور جو بہت زیادہ سوچنے کے عادی ہو وہ بھی اکثر بڑھی ہوئی تیزابیت کا شکار رہتے ہیں زیادہ سوچنے کی وجہ سے رات میں نیند نہیں آتی اور ذہن پر مسلسل دباؤ بنا رہتا ہے  زیادہ تفکّر کی وجہ سے معدہ میں ایسڈ کا سراؤ بڑھ جاتا ہے اورسزا نلتی ہے پیٹ کو !
سبزیوں میں میتھی کی بھاجی  ، بیگن ، مٹکی ، چنے وغیرہ کا تیزابیت بڑھانے میں کافی بڑا رول ہے۔ اسی طرح بیسن کی تلی ہوئی اشیا  ، گوشت چکن ، زیادہ مرچ والی غذائیں بھی تیزابیت میں خاطر خواہ اضافہ کرتی ہے۔
کھانے کے  بعد فوراً سو جانا اور رات میں دیر سے کھانا   ایسی عادتیں ہے تیزابیت کو بڑھاتی ہے  اگر رات میں کھانا جلدی کھا لیا جائے  تو  اور خاص طور سے رات میں مرغن و مسالحہ دار غذاؤں سے پرہیذ کیا جائے تو ایسیڈتی کو کافی حد تک  کنٹرول کیا جا سکتا ہے۔